چیف جسٹس عامر فاروق نے ریمارکس دیے کہ ہائیکورٹ ڈپٹی کمشنر کی ذمہ داریاں نہیں سنبھال سکتی، اگر آپ ڈپٹی کمشنر کے کسی آرڈر سے متاثر ہوئے تو عدالت آئیں۔

ایڈووکیٹ جنرل اسلام آباد نے عدالت میں کہا کہ سپریم کورٹ نے کہا کہ لانگ مارچ نہیں روک سکتے۔

چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ نے پی ٹی آئی کے وکیل سے مکالمہ کرتے ہوئے کہا کہ آپ نے جی ٹی روڈ، موٹر وے اور دیگر شاہراہیں بلاک کیں، آپ کو بھی ذمہ داری کا مظاہرہ کرنا چاہیے۔

تحریک انصاف کے وکیل نے کہا کہ نئی درخواست کے لیے پارٹی قیادت سے مشاورت کرنی ہے۔

عدالت نے پی ٹی آئی وکیل کی استدعا پر سماعت 22 نومبر تک ملتوی کرتے ہوئے کہا کہ پی ٹی آئی نے اگر جلسہ کرنا ہے تو انتظامیہ کو نئی درخواست دے، اگر جلسےکی اجازت دیں گے تو یقینی بنائیں گے کہ سڑکیں بلاک نہ ہوں، انتظامیہ نے یقینی بنانا ہے کہ عوام کے حقوق متاثر نہ ہوں۔